شاہ رخ کے پاکستانی پرستار کی بھارتی جیل سے رہائی ،ْ
پرسوں پاکستان کے حوالے کیا جائیگا، مینگورہ سے تعلق رکھنے والا عبداللہ تقریباً ایک سال اور 7 ماہ کا عرصہ بھارتی جیل میں قید رہا


ممبئی (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 24 دسمبر2018ء)بالی ووڈ کے کنگ خان سے ملاقات کے جنون میں واہگہ بارڈرکے راستے غیر قانونی طریقے سے سرحد عبور کرنے والے پاکستانی لڑکے عبداللہ کو 26 دسمبر کو پاکستان کے حوالے کیا جائیگا۔سوات کے علاقے مینگورہ سے تعلق رکھنے والے 20سالہ عبداللہ کو25 مئی 2017 ء کو بی ایس ایف کے اہلکاروں نے اٴْس وقت گرفتار کیا تھا ،ْجب اٴْس نے واہگہ بارڈر کی زیرو لائن کو غیر قانونی طریقے سے عبور کیا تھا۔

مینگورہ سے تعلق رکھنے والا عبداللہ تقریباً ایک سال اور 7 ماہ کا عرصہ بھارتی جیل میں قید رہا۔عبداللہ کی حراست کے فوراً بعد پنجاب رینجرز نے پی ایس ایف اہلکاروں سے اس کی واپسی کامطالبہ کیا تاہم بی ایس ایف نے یہ موقف اپنایا کہ اعلیٰ حکام کی اجازت ملنے کے بعد ہی اسے واپس کیا جائیگا۔ صورتحال میں بھارتی بارڈر فورس نے عبداللہ کو امرتسرکی مقامی عدالت میں پیش کیا جس کے حکم پر اسے جوڈیشل ریمانڈ پر 9 جون 2017 تک کیلئے جیل بھیج دیا۔

بھارتی بارڈر فورس نے اپنی ابتدائی رپورٹ میں بتایا تھا کہ عبداللہ کے قبضے سے انہیں پاکستانی پاسپورٹ اور 9 ہزار روپے کی پاکستانی کرنسی برآمد ہوئی ہے۔سارے واقعہ کے بعد سوات میں جب عبداللہ کے گھر والوں سے رابطہ کیا گیا توانہوں نے بتایا کہ اس کا ذہنی توازن ٹھیک نہیں تھا اور اٴْس کا علاج بھی جاری تھا۔عبداللہ کے بھائی نے بتایا کہ عبداللہ کو بالی ووڈ کے اداکاروں اور خاص طور پر شاہ رخ خان سے ملنے کا جنون کی حد تک شوق تھا ان کا مزید کہنا تھا کہ ہمیں میڈیا کے ذریعے پتہ چلا کہ عبداللہ کو بی ایس ایف نے گرفتار کیا ہے۔

بھارتی حکام نے بتایا کہ جیل میں قید دونوں پاکستانیوں جن میں کراچی کے عمران وارثی اور سوات کے عبداللہ شامل ہیں ، انہیں ایک ساتھ 26 دسمبر کو واہگہ بارڈر کے ذریعے پاکستا نی حکام کے حوالے کیا جائیگا۔
خبر کا مکمل متن پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے
اُردو پوائنٹ شوبز کا مرکزی صفحہ